پیغام مہتمم
جامعہ دارالعلوم صدیقیہ پیرطریقت ورہبرشریعت حضرت مولانا سیدولی شاہ صاحب
الحمد للہ وحدہ، والصلوۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ اما بعد فاعوذ باللہ من الشیطن الرجیم بسم اللہ الرحمن الرحیم قد افلح من زکھا ، وقد خاب من دسھا،
بردران اسلام اللہ تعالیٰ نے سات قسمیں کھاکر فرمایا یقینا کامیاب ہوگیا وہ شخص جس نے اپنا تزکیہ کیا، اور یقینا ناکام ہوا وہ شخص جس نے اپنے نفس کا تزکیہ کیا۔اپنی نفس کے اصلاح اور تزکیہ کے لئے کسی باشرع مرشد سے بیعت ہونا ضروری ہے ،اس لئے کہ کوئی فن آدمی بغیر اُستاد کے حاصل نہیں کرسکتا ، اس طرح نفس کا تزکیہ اور اصلاح مرشد کے بغیر اکثرنہیں ہوسکتا۔
رسول پاک ﷺ نے صحابہ رضی اللہ عنہ کے نفوس کا ایسا تزکیہ اور اصلاح کیا ،کہ وہ ھدایت کے آفتاب بن گئے ،اور اُن کا ایمان اُ مت کے لئے معیار بن گیا ،اور رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ،”الصحابی کالنجوم بایھم اقتدیتم اھتدیتم ” اور بغیر تزکیہ نفس او ر اصلاح کےدارین میں کامیابی اور نجات ناممکن ہے ۔
میرے دوستوں ! اس لئے ہر مسلمان کو چاہیئے،کہ سب سے پہلے اپنی اصلاح کی طرف متوجہ ہوجائے ، اور اصلاح مرشد کے بغیر اکثر ناممکن ہے ،اس لئے کہ جس طرح جسمانی امراض ہے ، اور جسمانی امراض کا علا ج اکثر ڈاکٹر اور معالج کے بغیر نا ممکن ہیں ،اس طرح روحانی امراض ہیں ،جیسے تکبر، ریا ، حب جاہ، حب مال ، حسد وغیرہ ان کا علاج بھی روحانی معالج کے بغیر اکثر ناممکن ہے۔
میں نے (احقر مولوی سید ولی شاہ عفی عنہ ) 1980 میں حضرت اقدس مفتی محمد فرید ؒ سے سلسلہ نقشبندیہ کے میں بیعت کیا ، ھمارے سلسلہ نقشبندیہ کے پینتیس 35 اسباق ہیں ، اور تین معمولات ہیں ، یعنی قرآن مجید کی تلاوت ، استغفار ،اور درود شریف۔
حضرت مفتی صاحب ؒ نے مجھے 1988ء میں خلافت سے نوازا، اگر چہ میں اُس کا اھل نہ تھا ،حضرت مرشد ؒ نے فرمایا کہ اب دوسروں کو ذکر دیا کرو۔پھر حضرت مفتی صاحب کے وفات کے بعد میں نےحضرت اقدس شیخ الحدیث مولانا سلیم اللہ خان صاحبؒ سے بیعت کیا۔
الحمد للہ جامعہ صدیقیہ گڑھی کپورہ ضلع مردان کی بنیاد 1989ءمیں رکھی ، مدرسہ اور خانقاہی نظام دونوں الحمدللہ اُسی وقت سے چل رہے ہیں ،کافی فضلاء اور فاضلات فارغ التحصیل ہو چکے ہیں ،اور ہو رہےہیں ،اور ہمارے خانقاہ کانام خانقاہ فریدیہ سلیمیہ ہے ،اور خانقاہی نظام سے کافی لوگوں کی اصلاح بھی ہوچکی ہر جمعہ کو جمعہ کی نماز کے بعد جامعہ میں مجلس ہوتا ہے،اور مجالس ذکر مردان شہر میں ہوتے ہیں، لہذاگزارش ہے ،کہ اپنی اصلاح کی فکر کریں ، کسی باشرع مرشد سے بیعت کرکے اپنی اصلاح کرائیں موت سر کے اوپر ہے ، ہمارا وطن آخرت ہے ،وہاں ہمیشہ رہنا ہے ،اس مختصر زندگی میں اپنی اصلاح کرکے آخرت کی تیاری کریں ،اور اپنے اہل وعیال اور دوسرے مسلمانوں کی اصلاح کی بھی فکر کریں ۔
اللہ پاک ہم سب کو توفیق عطا فرماویں ۔آمین ثم آمین ۔واٰخر دعوانا ان الحمد للہ رب العالمین۔

1 Comment

Leave a Reply to A WordPress Commenter Cancel reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *